December Poetry in Urdu

In this article we have collected December poetry in Urdu because every person in December month like winter season every person sad so I decided I write December poetry  in Urdu for my viewers.

Also Read: November Poetry

December poetry in Urdu text

December Poetry in Urdu
December Poetry in Urdu

کاش کوئی جا کے بتائے اسں

 کو میں اور دسمبر ختم ہو رہے ہی

Kash Koi jakar Bataye usko Main Aur December khatm ho rahe hain

December Poetry in Urdu

ان دنوں تعلق تھوڑا مضبوط رکھنا سنا ہے دسمبر کے بچھڑے کبھی ملا نہیں کرتے

ine Dinon Taluk thoda majbut Rakhna suna hai December ke Bichhade Kabhi Mila Nahin karte

December Poetry in Urdu

 ہر طرف سے ہو رہی ہے تجھ پہ شاعری عہد دسمبر تیری خاصیت کیا ہے

Har Taraf se ho rahi hai Tujh per shayari and December Teri khasiyat Kya Hai

December Poetry in Urdu

میں اخر کیوں دسمبر کو سبیل سام دے ڈالوں تیری یادیں کب مہینوں کا کوئی لحاظ کرتی ہے

main Aakhir Kyon December ko Sabhi Ilzaam De Dalo Teri yaden kab mahinon ka koi lihaj karti hai

December Poetry in Urdu

 میرا دسمبر سے کوئی واسطہ نہیں میری بربادی میں پورا سال شریک تھا

Mera December Se Koi Vasta Nahin Meri barbadi Mein pura Sal Sharif ha

Alvida december poetry in urdu

Alvida december poetry in urdu

 کچھ تعلقات دسمبر اور جنوری کی طرح ہوتے ہیں رشتہ کافی نزدیک کا اور دوریاں پورے سال کی

Kuchh Taluka December aur January Ki Tarah Hote Hain Rishta Kafi najdeek ka aur duriyan pure sal ki

Alvida december poetry in urdu

 کل کریں گے تم پر شاعری دسمبر کہ اج نومبر کی رات اخری ہے

cal Karenge Tum per shayari December Aaj November ki Aakhiri Raat Hai

Alvida December Poetry in Urdu

 بن تیرے کائنات کا منظر اک دسمبر کی شام ہو جیسے درد ٹھہرا ہے اگے یوں دل میں عمر بھر کا قیام ہو جیسے

Bin Tere kaynat Ka Manzar 1 December Ki Sham Ho Jaise Darde Dil Hai Aage Yun Dil Mein Umra Bhar Tak taiyar Ho Jaise

Alvida December Poetry in Urdu

 شال پہنائے گا اب کون دسمبر میں تمہیں بارشوں میں کبھی بھیگو گے تو یاد اؤں گا

ShaaL pehnaega ab kaun December mein Tumhen barishon Mein Kabhi Bhi goge to Yad aaunga

Alvida December Poetry in Urdu

دسمبر اب کے جاؤ تو مجھے بھی ساتھ لے جانا مجھے بھی شام ہونا ہے مجھے بھی گمنان ہونا ہے

December Ab Ke jao to mujhe bhi Sath Le Jana Mujhe Bhi Sham hona hai mujhe bhi gumnam hona hai

Alvida December Poetry in Urdu

 بہت سے غم دسمبر میں دسمبر کے نہیں ہوتے اسے بھی جون کا غم تھا مگر رویا دسمبر میں

bahut se Ham December mein December ke nahin Hote ise bhi June ka Gam tha magar Roya December mein

Alvida December Poetry in Urdu

مجھے موسم سے کیا لینا نومبر ہو دسمبر ہو میرے سب رنگ تجھ سے ہیں بہاروں کے خزاؤں کے

Mujhe Mausam Se Kya Lena November Ho December ho mere Sab Rang Tujhse Hai Baharon ke fizaon ke

Alvida December Poetry in Urdu

  یادوں کی شال اوڑ کے اوارہ گردیاں کاٹی ہیں ہم نے یوں بھی دسمبر کی سردیاں

Yadon Ki Shal Odh Ke Aawara galtiyan Kati Hai Humne jo bhi December ki sardiyan

Alvida December Poetry in Urdu

 دسمبر کی چند ساتوں جتنا تعلق صدیوں مجھے توڑتا رہے گا

December ki Chand saton Jitna Taluk Sadiyon Mujhe todta rahega

25 december poetry in urdu

25 December Poetry in Urdu

جمع پونجی یہی ہے عمر بھر کے میری تنہائی اور میرا دسمبر

Jama punji yahi hai Umra Bhar Ki Meri Tanhai aur mera December

25 December Poetry in Urdu

تم دسمبر کی دھند کی طرح ہو جو میرے چاروں طرف کسی سحر کی طرح پھیلتی چلی جا رہی اور مجھے تمہارے سوا کچھ دکھائی نہیں دیتا

Tum December ki dhund ki tarah ho Jo Mere Charon Taraf Kisi Shahar Ki Tarah failti Chali ja rahi aur Mujhe Tumhare Siva Kuchh Dikhai Nahin deta

25 December Poetry in Urdu

 تم عشق کرو اور درد بھی نہ ہو گویا دسمبر بھی ہو اور سرد بھی نہ ہو

Tum Ishq karo aur Dard Bhi Na Ho Goya December bhi ho aur Sard Bhi Na Ho

25 December Poetry in Urdu

ہلکی ہلکی ہوا ہلکا ہلکا درد دل انداز اچھا ہے دسمبر تیرے انے کا

Halki Halki Hawa Halka Halka Dard Dil Andaaz asha hai December Tere Aane ka
 گرم باہوں کی شالی دے دو یک یختا ہوائیں ہیں دسمبر کی

Garam Bahon ki Sal hi de do yak yakta hawayen Hain December ki
 یہ سال بھی اداسیاں دے کر جا رہا ہے تم سے ملے بغیر دسمبر بھی جا رہا ہے

yah Sal Bhi udasiyan dekar Ja Raha Hai Tumse Mile bagair December Bhi Ja Raha Hai
 دسمبر میں کہا تھا نہ کہ تم واپس لوٹ اؤ گے ابھی تک تم نہیں ائے دسمبر تو لوٹ ایا ہے

December mein kaha tha na ki tum Wapas Laut Aaoge Abhi Tak Tum Nahin Aaye December to Laut aaya hai
 الودا ڈوبتے سورج کی افسردہ کرن اے دسمبر کی ٹھٹھرتی اخری شام الودا

Alvida dubte Suraj Ki Ab Sauda Kiran and December ki Aakhiri Sham Alvida
 سرد ہوائیں کیا چلی میرے شہر میں ہر طرف یادوں کا دسمبر بکھر گیا

Sard hawayen kya Chali Mere Shahar Mein Har Taraf Yadon ka December bikhar Gaya
 دسمبر کی سردی ہے اس کے ہی جیسی ذرا سا جو چھولے بدن کانپتا ہے

December Ki Sardi Hai Iske hi Jaisi Jara Sa Jo Chhole Badan Kamta hai
 سرد ٹھٹھرتی ہوئی لپٹی ہوئی سر سر کی طرح زندگی مجھ سے ملی پچھلے دسمبر کی طرح

Sar thahari Hui lipati Hui Sar Sar Ki Tarah Jindagi Mujhse Mili Pichhle December Ki Tarah  لوٹ اؤ کے ابھی بھی کچھ نہیں بگڑا ابھی بھی باقی ہے ایک رات اس عمل کی

Laut Aao ke abhi bhi Kuchh Nahin Bigada abhi bhi Baki Hai Ek Raat December ki
 مجھے موسم سے کیا لینا نومبر ہو دسمبر ہو میرے سب رنگ تجھ سے ہیں بہاروں کی خزاںؤں کے

Mujhe Mausam Se Kya Lena November Ho December ho mere Sab Rang Tujh Se Hai Baharon ke fizaon ke
 سنو اس دسمبر کی اخری عشرے میں ہم بیٹھ کر تنہا کسی ویران گوشے میں ہوا کو دکھ سنائیں گے تمہیں ہم بھول جائیں گے

Suno is December ki Aakhiri Ashray Mein Ham baithkar Tanha Kisi veraan Gosht Mein Hawa ko Dukh sunaenge Tumhen Ham Bhul jaenge
 چھو لیا ہے اب نومبر کی ہواؤں نے اس کا چہرہ موسم دل اب خوش گواہ رہے گا دسمبر تک

ŕ Chhu liya hai ab November ki Hawaon Ne uska Chehra Mausam Dil ab Khush gawar Rahega December tak ایک بار جو بچھڑے تو ائیں گے نہ لوٹ کر یہ مٹی کے انسان دسمبر نہیں ہوتے

ek baar Jo bichre to aaenge na lautkar yah Mitti ke Insan December Nahin Hote  میں کیسے سرد ہاتھوں سے تمہاری گال چھوتا تھا دسمبر میں تمہیں میری شدت یاد ائے گی

Main Kaise sar davaon se Tumhari Gal chhuta tha December mein Tumhen Meri shiddat Yad I

میرا کیا رشتہ نومبر دسمبر جنوری سے سب مہینے ظالم ہیں عشق کے  فقیروں پر

Mera Kya Rishta November December January Se Sab mahine jalim Hai Ishq ke fakiron per

 سخت جان لیوا یہ نومبر دسمبر کی شام بس اوڑنے کو غم ہے اور پینے کو چائے

Sakht Jaan Leva in November December Ki Sham mein bus udane ko gam Hain aur Peene ko chai

بارش کی بوندیں ہی اسے میری یاد دلا دیں
بارش میں کبھی ہم بھی ساتھ چلے تھے

Barish ki boondain hi use meri yaad dila dein
Barish mein kabhi hum bhi saath chale thay

جب کالے بادل گھر آئیں اور بارش زور سے ہوتی ہے
دروازے شور مچاتے ہیں کچھ لوگ یاد آتے ہیں

Jab kaale badal ghar aaye aur barish zor se hoti hai
darwaze shor machate hain kuch log yaad aate hain

تمہاری یاد کی برسات جب برستی ہے
میں ٹوٹ جاتا ہوں کچے سے جھونپڑے کی طرح

Tumhari yaad ki barsaat jab barasti hai
Main toot jaata hoon kache se jhonpde ki tarah

بارش کی بوندوں میں جھلکتی ہے تصویر تیری
آج پھر بھیگ بیٹھیں ہیں تمہیں پانے کی چاہت میں

Barish ki boondon mein jhalkti hai tasveer teri
Aaj phir bheeg baithe hain tumhe paane ki chaahat mein

اتنے سلیقے سے تم یاد آتے ہو
جیسے بارش ہو وقفے وقفے سے

Itne saleeqe se tum yaad aate ho
Jaise barish ho waqfe waqfe se

مجھے موسم سے کیا لینا نومبر ہو دسمبر ہو
میرے سب رنگ تجھ سے ہیں بہاروں کے خزاؤں کے

Mujhe mausam se kya lena November ho December ho
Mere sab rang tujh se hain bahaaron ke khazaon ke

نہ وہ ھوائیں نہ بارش نہ سردی کا وہ عالم دسمبر
پہلے تو کبھی ایسے تیرا آنا نہ ہوا

Nah woh hawaayein nah barish nah sardi ka woh aalam December
Pehle to kabhi aise tera aana nah hua

بارشوں میں پتنگیں اڑایا کرو زندگی کیا ہے
خود ہی سمجھ جاؤ گے

Barishon mein patangayin uraya karo zindagi kya hai
Khud hi samajh jao ge

پوچھتے تھے نا کتنا پیار ہے تم سے
لو گن لو اب بارش کی بوندیں

Puchhte the na kitna pyaar hai tum se
Lo gin lo abhi barish ki boondain

بارش ختم ہو جائے تو
چھتری بوجھ لگنے لگتی ہے

Barish khatam ho jaaye to
Chhatri bojh lagne lagti hai

december poetry in urdu 2 line

اسے کہنا کہ اپنی قسمت پے ناز کرنا اچھا نہیں ہوتا
ہم نے بارش میں بھی جلتے ہوئے گھر دیکھیں ہیں

Use kehna ke apni qismat pe naaz karna acha nahi hota
Hum ne barish mein bhi jalte hue ghar dekhe hain

بارشوں میں چلنے سے اک بات یاد آتی ہے
پھسلنے کے خوف سے وہ ہاتھ تھام لیتے تھے

Barishon mein chalne se ek baat yaad aati hai
Phisalne ke khauf se woh haath thaam lete thay

میں کیسے سرد ہا تھوں سے تمہارے گال چُھوتا تھا
دسمبر میں تمہیں میری شرارت یاد آ ئی گی

Main kaise sard hawaaon se tumhare gaal chhoota tha
December mein tumhe meri sharaarat yaad aayegi

مجھے آب فرق نہیں پڑتا دسمبر بیت جانے کا
اداسی میری فطرت ہے اسے موسم سے کیا لینا

Mujhe ab farq nahi padta December beet jaane ka
Udasi meri fitrat hai use mausam se kya lena

اب کے پھر لوٹ آیا ہے دسمبر یادیں
پھر اتریں گی دھند کی صورت

Ab ke phir loot aaya hai December yaadein
Phir utrein gi dhund ki soorat

Romantic december poetry in urdu

یہ دسمبر کی دھند
یہ سردی
یہ تلخی
یہ یادیں
یہ آنسو
یہ اداسیاں
یہ ادھوری نامکمل محبتیں
یہ سوگواری
قسمے یہ سب ان عاشقوں کی پیداوار ہے ورنہ مہینہ دسمبر کا ماڑا نہیں😐😐

جنوری خود سے جنگ میں گزرا
فروری فرصتوں سے عاری تھا
مارچ میں آس کے گلاب کھلے
اور … ایپریل پُر بہار رہا
مئی کی گرمی نے دل جلايا تھا
جون میں اک جنون چھایا تھا
پھرجولائی بهى لائی تنہائی
اور اگست نے مجهے نڈھال کیا
یہ ستمبر بھی اک ستمگر تھا
اُس سے بچھڑے تو اکتوبر تھا
پھر نومبر نہ مجھ کو راس آیا
اور .… دسمبر نے آ کے توڑ دیا
اس_برس_کی_یہی_کہانی_ہے
میں_نے_قسمت_سے_ہار_مانی_ہے

کوئی ملا تھا مجھے دسمبر کی شام
نظریں چار ہوئی تھیں دسمبر کی شام

یوں تو صبح تک کا ہمسفر ٹھہرا تھا وہ
ہاں مگر دل شاد ہوا تھا دسمبر کی شام

میں نے کئی سوکھے پتے جمع کیے تھے
ہاں ان کو جلایا تھا دسمبر کی شام

میں نے دیکھا تھا دل والوں کا ایک قافلہ
لٹ کہ آ گیا تھا دسمبر کی شام

اس کہ انتظار میں اسٹیشن پہ بیٹھا رہا سحر میں
وہ لوٹا مگر دسمبر کی شام

آ ستمگر کہ آخری بار تو لگا لے گلے
آج گزر جائے گی مگر الوداعی دسمبر کی شام

__________🌚🔥

Sad december poetry in urdu

اسے کہنا دسمبر لوٹ آیا ہے
ہوائیں سرد ہیں اور وادیاں بھی دھند میں گم ہیں
پہاڑوں نے برف کی شال پھر سے اوڑھ رکھی ہے
سبھی رستے تمہاری یاد میں پُرنم سے لگتے ہیں
جنہیں شرفِ مسافت تھا
وہ سارے کارڈز
وہ پرفیوم
وہ چھوٹی سی ڈائری
وہ ٹیرس
وہ چائے
جو ہم نے ساتھ میں پی تھی
تمہاری یاد لاتے ہیں
تمہیں واپس بلاتے ہیں
اسے کہنا
کہ دیکھو یوں ستاؤ نا
دسمبر لوٹ آیا ہے
سنو تم لوٹ آؤ نا

دسمبر بھی تو اک مہینہ ہے اسے درد سے کیا مطلب
مسئلہ تو دلوں کا ہے۔۔۔۔
اس مسئلے سے اسےکیا مطلب

یونہی بدنام کر رکھا کہ شامیں اداس لے آیا
اداسی تو دلوں میں ہے مہینوں سے اسے کیا مطلب

بس اک میری بات نہیں تھی سب کا درد دسمبر تھا
برف کے شہر میں رہنے والا اک اک فرد دسمبر تھا

پچھلے سال کے آخر میں بھی حیرت میں ہم تینوں تھے
اک میں تھا، اک تنہائی تھی، اک بے درد دسمبر تھا

اپنی اپنی ہمت تھی، اپنی اپنی قسمت تھی
ہاتھ کسی کے نیلے تھے، اور پیلا زرد دسمبر تھا

پھولوں پہ تھا طاری سکتا اور خوشبو سہمی سہمی تھی
خوف زدہ تھا گلشن سارا اور دہشت گرد دسمبر تھا

یہ جو تیری آنکھ میں پانی یہ جو تیری بات میں سردی
اتنا ہمیں بتاؤ تم، کیا ہمدرد دسمبر تھا…

‏دسمبر اب کے جانا تو.❤
دلوں کے میل…
حسد کی آگ…
بری نظریں…
گھٹن اور بدگمانی سب…
تم اپنے ساتھ لے جانا…
جہاں تم ڈوبتے ہونا…
وہیں ان کو بھی…
دفنا دینا…
تم تحفے تو بھیجو گے؟❤
جنوری کے ہاتھوں نا؟
محبت بے تحاشا سی….!!
خلوص و گرم جوشی بھی…
بےغرض ناطے…
گہرے تعلق اور
نرم سے دل…
جو سب کے لیے دھڑکتے ہوں ❤بھجوا دینا..!!

بس اک میری بات نہیں تھی سب کا درد دسمبر تھا
برف کے شہر میں رہنے والا اک اک فرد دسمبر تھا

پچھلے سال کے آخر میں بھی حیرت میں ہم تینوں تھے
اک میں تھا، اک تنہائی تھی، اک بے درد دسمبر تھا

اپنی اپنی ہمت تھی، اپنی اپنی قسمت تھی
ہاتھ کسی کے نیلے تھے، اور پیلا زرد دسمبر تھا

پھولوں پہ تھا طاری سکتا اور خوشبو سہمی سہمی تھی
خوف زدہ تھا گلشن سارا اور دہشت گرد دسمبر تھا

یہ جو تیری آنکھ میں پانی یہ جو تیری بات میں سردی
اتنا ہمیں بتاؤ تم، کیا ہمدرد دسمبر تھا…

ایک طرف تیرا ساتھ اور سردیوں کی رات ہو
ایک طرف ہو آسمان کی گھن گرج اور برسات ہو

تم سے ملنے کے اور دن بھی حسین تر ہونگے لیکن
دسمبر میں ملنے آؤ کہ میری تمام اداسیوں کو مات ہو

december shayari in urdu

♥️🔥

پچھلے برس تم ساتھ تھے میرے اور دسمبر تھا
مہکے ہوئے دن رات تھے میرے اور دسمبر تھا

بارش کی بوندوں سے دل پہ دستک ہوتی تھی
سب موسم برسات تھے میرے اور دسمبر تھا

چاندنی رات تھی سرد ہوا سے کھڑکی بجتی تھی
ان ہاتھوں میں ہاتھ تھے میرے اور دسمبر تھا

بھیگی زلفیں بھیگا آنچل نیند تھی آنکھوں میں
کچھ ایسے حالات تھے میرے اور دسمبر تھا

دھیرے دھیرے بھڑک رہی تھی آتش دان کی آگ
بہکے ہوئے جذبات تھے میرے اور دسمبر تھا

پیار بھری نظروں سے فرحؔ جب اس نے دیکھا تھا
بس وہ ہی لمحات تھے میرے اور دسمبر تھا.

دسمبر اب کے جاؤ تو ,
مجھے بھی ساتھ لے جانا,

مجھے بھی شام ھونا ھے ,
مجھے بھی گمنام ھونا ھے,

نھیں ھے کوئی میرا ھم دم ,
نھیں کوئی میرا ساتھی ,

مجھے بھی ساتھ لے جاؤ ,
مجھے برباد ھونا ھے ,
دسمبر اب کے جاؤ تو مجھے بھی ساتھ لے جانا,

یه دنیا اک دھوکه ھے ,
مجھے اپنوں نے لوٹا ھے ,

ھیں چھرے دل نشیں لیکن ,
دلوں میں ان کے دھوکه ھے ,

دسمبر اب کے جاؤ تو ,
مجھے بھی ساتھ لے جانا

بات کرتے ہو کیا دسمبر کی
ہے الگ ہی ادا دسمبر کی🎀🥀

تھا سہانا بڑا نومبر بھی
بات ہی ہے جدا دسمبر کی 🎀🥀

کون سی رات اچھی لگتی ہے
چاند کہنے لگا دسمبر کی 🎀🥀

اب تو یوں ہے کہ جیسے جزبوں کو
لگ گئی ہے ہوا دسمبر کی🎀🥀

برف لا کر ہتھیلیوں پر رکھ
مجھ کو مہندی لگا دسمبر کی🎀🥀

جون کی تلخیاں بھلا کے آج
بات کرتے ہیں آ دسمبر کی 🎀🥀

ایک دو شعر کچھ نہیں جاناں
آج غزلیں سنا دسمبر کی 🎀🥀

گرم بانہوں کی شال ہی دے دو
چل رہی ہے ہوا دسمبر کی 🎀🥀

میرے بستر میں آ کے دیکھے تو
ٹوٹ جائے انا دسمبر کی 🎀🥀

شاہ دل آ گیا وہ پہلو میں  ہے یہ ساری عطا دسمبر کی🎀🎀

دسمبر کا آخری یخ بستہ دن ہے
زندگی کا ایک اور برس تمام ہوا

December ka aakhri yak basta din hai
Zindagi ka ek aur baras tamam hua

Also Read This Quotes

Agar aapko Hamari yah likhi hui poetry Pasand I hai to ise Apne doston ke sath social media platform per share karna boliye Kyunki aapka Ek share Hamari Jindagi Badal sakta hai

Leave A Reply

Please enter your comment!
Please enter your name here